فائربندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ادلب کے شہریوں یا ترک فوج پر کوئی حملہ ہوا تو اپنی مرضی کے ہدف پر جواب دیں گے، ایردوان

0 2,006

ترک صدر رجب طیب ایردوان نے کہا ہے کہ فائربندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بشار الاسد یا روس کی طرف سے ادلب کے شہریوں یا ترک فوج پر کوئی حملہ ہوا تو اپنی مرضی کے ہدف پر جواب دیں گے۔ ترک صدر ایردوان نے یہ بیان جاملچا جامع مسجد میں جمعہ کی نماز کے بعد مسجد میں عوام الناس سے خطاب کرتے ہوئے دیا ہے۔

ایردوان نے کہا ، "اب ہمارے پاس شہید ہیں۔ ہم بالآخر کل مذاکرات کی میز پر بیٹھ گئے اور آدھی رات [جمعرات] سے جنگ بندی پر اتفاق کیا۔ ہمیں امید ہے کہ یہ [فائر بندی] جاری رہے گی۔”

اس موقع پر ترک صدر رجب طیب ایردوان نے کرونا وائرس کے متعلق بھی بات کی اور عوام سے کہا کہ وہ ایک دوسرے سے احتیاط کے ساتھ روابط رکھیں اور ہاتھ سے ہاتھ مت ملائیں تاکہ ترکی میں کرونا وائرس کی کسی بھی وفا سے بچا جا سکے۔ یاد رہے کہ ترکی میں اس وقت تک کرونا وائرس کا کوئی کیس نہیں ہے۔

ترکی نے ادلب میں شامی حکومت کے فضائی حملے میں 34 ترک فوجیوں کی شہادت کے بعد آپریشن اسپرنگ شیلڈ کا آغاز کیا تھا۔ روس کے ساتھ 2018ء میں ہونے والے معاہدے کے مطابق ترک افواج ادلب میں شہریوں کو شامی حکومت اور اس کے اتحادیوں کے حملوں سے بچانے کے لیے تھیں۔

کئی ہفتے کی کشیدگی کے بعد ترکی اور روس نے جمعرات کو ادلب کے معاملے پر باہمی تعاون جاری رکھنے اور سیزفائر کرنے کا اعلان کیا۔ انہوں نے جنگ زدہ صوبے کے لیے نئے اسٹیٹس کا ارادہ بھی ظاہر کیا۔

سیزفائر جمعے کی شب 12 بجے شروع ہو چکا ہے۔ البتہ ایسی متعدد خبریں ملی ہیں کہ اس کے مؤثر ہونے کے نصف گھنٹے بعد ہی شامی فوج نے خلاف ورزیاں شروع کر دی تھیں۔

ہایت مہلک اور نئے وائرس COVID 19 سے دنیا بھر میں 98,424 افراد متاثر ہو چکے ہیں، اس کے تیزی سے پھیلاؤ کو تاحال نہیں روکا جا سکا ہے، تاہم حوصلہ افزا بات یہ ہے کہ صحت یابی کا سلسلہ بھی جاری ہے اور اب تک 55,640 افراد اس مہلک وائرس سے صحت یاب ہو چکے ہیں۔ چین میں ہلاکتوں کی تعداد 3,042 تک پہنچ گئی، جب کہ 80,552 لوگ متاثر ہو چکے ہیں۔

وائرس سے چین کے بعد سب سے زیادہ اموات یورپی ملک اٹلی میں ہوئیں، جن کی تعداد 148 ہے، جب کہ مجموعی متاثرین کی تعداد بڑھ کر 3,858 ہو چکی ہے۔ تیسرے نمبر جو ملک سب سے زیادہ متاثر ہوا وہ ایران ہے، جہاں وائرس سے 108 اموات ہو چکی ہیں، اور مجموعی متاثرین کی تعداد 3,513 ہے۔ چوتھے نمبر پر جنوبی کوریا ہے جہاں 40 افراد ہلاک ہو چکے ہیں اور 6,284 لوگ وائرس سے متاثرہ ہیں۔ متاثرہ افراد کی تعداد کو مد نظر رکھا جائے تو جنوبی کوریا میں اٹلی اور ایران سے بہت کم اموات واقع ہوئی ہیں۔ پانچویں نمبر پر سب سے زیادہ اموات امریکا میں ہوئی ہیں جہاں 13 افراد ہلاک ہوئے جب کہ متاثرہ افراد کی تعداد صرف 226 ہے۔

وائرس سے فرانس میں 7، جاپان میں 6، اسپین اور عراق میں تین تین اموات واقع ہوئی ہیں جب کہ سوئٹزرلینڈ اور برطانیہ میں ایک، ایک ہلاکت ہوئی ہے۔ فلسطین میں کرونا متاثرین کی تعداد 7 ہو گئی ہے، جس کے بعد سیاحوں پر 2 ہفتے کی پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ بھارت میں بھی وائرس کے 30 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، جس پر بھارتی وزیر اعظم نے بیلجئم کا دورہ منسوخ کر دیا، بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ نئی دہلی میں اسکول بند کر دیے گئے، اور سرکاری دفاتر میں بائیو میٹرک حاضری پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

تبصرے
Loading...