ہم خواتین کو تشدد اور امتیازی سلوک سے بچانے کے لیے ہر ممکن قدم اٹھائیں گے، صدر ایردوان

0 93

ترک خواتین کو حقِ رائے دہی ملنے کے 86 سال مکمل ہونے پر صدر رجب طیب ایردوان نے کہا ہے کہ "ہم خواتین کو ان پریشانیوں سے بچانے کے لیے ہر ممکن اقدامات اٹھائیں گے کہ جن کا سامنا بحیثیتِ انسان ان کو ویسے ہی نہیں ہونا چاہیے تھا – خاص طور پر تشدد اور امتیازی سلوک کا۔ ہم تعلیم سے لے کر پیشہ ورانہ زندگی اور سیاست سے لے کر غیر سرکاری تنظیموں کی سرگرمیوں تک یقیناً ہر میدان میں ان کی مدد کریں گے۔”

صدر رجب طیب ایردوان نے ترکی میں خواتین کو حقِ رائے دہی ملنے کے 86 سال مکمل ہونے پر منعقدہ تقریب سے خطاب کیا۔

خواتین کو سیاست سمیت ہر شعبہ ہائے زندگی میں اُن کے شانِ شایان مقام دلانے کے لیے آق پارٹی حکومت کی کوششوں کی جانب توجہ دلاتے ہوئے صدر ایردوان نے کہا کہ "ہم قانونی و انتظامی ترامیم کے ذریعے غلط رسوم و رواج کی اصلاح کر کے خواتین کے شانہ بشانہ ہیں۔”

اس امر پر روشنی ڈالتے ہوئے کہ ترکی میں خواتین کو ووٹ دینے یا منتخب ہونے کا اختیار کسی کی زور زبردستی کا نتیجہ نہیں تھا بلکہ یہ اپنے فطری راستوں سے گزر کر ہوا، صدر ایردوان نے کہا کہ "ہمیں آج بھی یہی کرنا چاہیے۔ ہم بحیثیتِ ادارہ اپنے خاندان کو مضبوط کرنے کے لیے اپنی تہذیبی و تاریخی اقدار کا خیال رکھیں گے، باقی کسی کا نہیں۔ ہم مرد، عورت اور بچے کو اس ادارے کا بنیادی عنصر سمجھتے ہیں۔”

صدر نے کہا کہ ” ہم خواتین کو ان پریشانیوں سے بچانے کے لیے ہر ممکن اقدامات اٹھائیں گے کہ جن کا سامنا بحیثیتِ انسان ان کو ویسے ہی نہیں ہونا چاہیے تھا – خاص طور پر تشدد اور امتیازی سلوک کا۔ ہم تعلیم سے لے کر پیشہ ورانہ زندگی اور سیاست سے لے کر غیر سرکاری تنظیموں کی سرگرمیوں تک یقیناً ہر میدان میں ان کی مدد کریں گے۔ اس کے علاوہ ہم ماؤں کی، بیگمات کی اور لڑکیوں کی حفاظت کریں گے اور خاندان میں اُن کے مقام اور حیثیت کو اور مضبوط کریں گے۔”

تبصرے
Loading...