کچھ لوگ ٹویٹر کے ایلون مسک کی ملکیت میں جانے پر خوفزدہ کیوں؟

0 1,420

گذشتہ امریکی صدارتی انتخابات میں ٹویٹر نے کھل کر ڈونلڈ ٹرمپ کے مقابلے میں جوبائیڈن کی حمایت کی تھی۔ اس حمایت میں میں وہ اس قدر آگے نکل گیا کہ ٹرمپ کا ٹویٹر اکاؤنٹ ہی بند کر دیا گیا۔ دنیا بھر میں ٹویٹر کے رویے کو محسوس کیا گیا کہ وہ کیسے انتخابی عمل میں کسی ایک پلڑے میں جھکاؤ پیدا کرتے ہوئے نتائج پر اثر انداز ہو سکتا ہے۔

بالکل اسی طرح کورونا وائرس کی وباء کے دوران بھی ٹویٹر کی آزادی اظہار رائے میں کوئی تبدیلی نظر نہ آئی۔ اس نے جان بوجھ سائنسی تحقیقات اور اس کے نتائج کو محدود کرنے کی اپنی کوشش جاری رکھی اور سچائی کا ایک رخ پیش کرنے کی کوشش کی۔ ٹویٹر نے معروف بائیو کیمسٹ رابرٹ میلون جیسے سائنسدانوں کے اکاؤنٹس کو محدود کر دیا، جنہوں نے mRNA ٹیکنالوجی کا بنیادی ڈھانچہ دریافت کیا تھا۔ اس نے تعلیمی جرائد میں شائع ہونے والے تحقیقاتی مضامین تک رسائی کو روک دیا۔ یہاں تک کہ اس نے ایسے اکاؤنٹس کو بھی بند کر دیا جو کینیڈا میں COVID-19 اقدامات کے خلاف احتجاج کرنے والے ٹرک ڈرائیوروں کی حمایت کر رہے تھے۔

ٹویٹر انتظامیہ نے اس سنسرشپ کو ان تمام واضع مثالوں کی وجہ سے کچھ مبہم معیارات جیسے "عوامی تحفظ” یا "عوامی صحت” کی اصطلاحات سے جواز فراہم کرنے کی کوشش کی۔ تاہم یہ کہتے ہوئے بھی اس نے دوسری طرف کہا گیا کہ وہ اس طرح کی ٹویٹس سے متعلق قانونی کاروائی کا حصہ نہیں بنے گا۔ یہ کہہ کر گویا اس نے خود ہی اپنی سنسر شپ پالیسی کو متنازعہ بنا دیا تھا۔ کیونکہ دی گئی مثالوں میں کسی قانون کی نہ تو خلاف ورزی کی گئی تھی اور نہ ہی وہ ٹویٹس "نفرت آمیز” کیٹگری میں آتی تھیں جس نے عام عوام کو نقصان ہو رہا ہو۔ اس پس منظر میں یہ سوال بھی اٹھا کہ کیسے ٹرمپ کے ٹی وی پر بولے گئے جوبائیڈن پر الزامات، ٹویٹر پر جرائم بن گئے؟ یا ٹویٹر نے کیسے یہ فیصلہ کر لیا کہ کون سے کورونا وائرس سے متعلق کون سے سائنسی تحقیقات شائع کرنے کے قابل ہیں اور کون سی نہیں ہیں۔

رجب طیب ایردوان کی اسپیس ایکس کے بانی ایلون مسک سے ملاقات

سنسر شپ، جعلی صارفین اور الگورتھم کے کھیل سے اپنی ساکھ کو کم کرنے والے سماجی پلیٹ فورم ٹویٹر کے شئیرز پر کافی عرصے سے بحث چل رہی ہے۔ تاہم ہیرا پھیری کی طاقت اب بھی ٹویٹر کو مختلف عناصر کے لیے اسے قیمتی بناتی ہے۔ تازہ خبروں میں ایلون مسک نے ٹویٹر کو 43 بلین ڈالرز کی خطیر رقم کے عوض خرید لیا ہے۔ اس سے یہ بحث ایک نئے فیز میں داخل ہو گئی ہے۔

ایسے وقت میں، ایلون مسک، جو پہلے ہی ٹویٹر کے 9% کے مالک تھے، نے پلیٹ فارم کے باقی حصص خریدنے کی پیشکش کی۔ اسے پلیٹ فارم کی مارکیٹ ویلیو سے بہت زیادہ تجویز کے جواب میں شدید غصے کا سامنا کرنا پڑا۔ اسے امریکہ میں ایک شیطانی مہم کا سامنا کرنا پڑا ہے جس میں ایک بار پھر یہ انکشاف ہوا ہے کہ ٹوئٹر کوئی تجارتی ادارہ نہیں ہے بلکہ امریکی اسٹیبلشمنٹ کا نظریاتی آلہ ہے۔ اینٹی مسک بلاک کے محافظوں کے مطابق، اتنی بڑی طاقت کسی ایک شخص کے پاس نہیں ہونی چاہیے۔ وہ سوچ رہے ہوں گے کہ مسک جیسے بے قابو آزادی پسند، جس نے پہلے ہی کہا تھا کہ وہ الگورتھم کھولیں گے اور سنسرشپ کو روکیں گے، کو ٹوئٹر نہیں چلانا چاہیے۔ خدا نہ کرے پھر وہ ٹرمپ کے اکاؤنٹ کو بھی ان بلاک کر دے! ٹوئٹر پر افراتفری آئے گی، نفرت انگیز جرائم بڑھیں گے!

جب میں نے ترکی سمیت عالمی میڈیا میں ایسے "Apocalyptic” منظرنامے کو دیکھتا ہوں، اور میں ان نام نہاد لبرلوں کو دیکھتا ہوں جو ٹویٹر کی فروخت کے لیے امریکی کانگریس کی منظوری کا مطالبہ کرتے پھر رہے ہیں، تو بے اختیار ہنسی آتی ہے۔ کیونکہ کوئی بھی "افراتفری” ٹویٹر کو آج کی نسبت بدتر موڑ پر نہیں پہنچا سکتی۔ بہر حال، ٹویٹر کی ناقابل تسخیر طاقت پر حکومت کرنے والی اجتماعی مرضی پر بھروسہ کرنے کی صرف ایک وجہ کون فراہم کر سکتا ہے؟ کیا ٹوئٹر پر کوئی ہے جس کا نام ہمیں ٹویٹر کے شریک بانی اور سابق سی ای او جیک ڈورسی کے علاوہ یاد ہو؟ ایک تاریک، مبہم کمیٹی، جس کا نمائندہ بھی واضح نہیں ہے، ہماری نئی عوامی جگہ پر صرف وہی کہتا ہے۔

اس تاریکی اور بے یقینی کے عالم میں ہم مسک جیسے حقیقی کردار پر کیوں شک کریں جو شفاف، کامیاب اور آزادی پسند رہا ہے اور اپنے خیالات اور طرز زندگی کو چھپانے کی ضرورت محسوس نہیں کرتا؟ ٹویٹر کے لیے جمہوری تبدیلی ناگزیر ہے، جو امریکی انتخابات سے قبل متحد تھی اور اس وبائی مرض کے دوران مرجھا گئی، ہماری آزادی اظہار کو محدود کر کے اور خاموشی کے دائرے کو مزید گہرا کیا گیا۔ اور موجودہ حالات ایک محنت کرنے والے مسک سے زیادہ کوئی قابل اعتماد نام نہیں ہے۔ ہم آپ کے پشت پر ہیں، ایلون!

 

 

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: