صدر ایردوان کا یوکرائنی ہم منصب سے ٹیلی فونک رابطہ

0 1,419

ترک صدارت اطلاعات کی طرف سے جاری بیان کے مطابق ٹیلی فونک گفتگو میں روس کے یوکرائن پر حملے اور تازہ ترین پیش رفت پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

گفتگو کے دوران صدر ایردوان نے یوکرائن کے شہریوں سے تعزیت کا اظہار کیا جو روسی حملے میں جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔

صدر ایردوان نے کہا کہ وہ جلد از جلد جنگ بندی کے لیے اپنی کوششیں کر رہے ہیں تاکہ مزید جانی نقصان کو روکا جا سکے اور یوکرائن کو مزید نقصان اٹھانے سے بچایا جا سکے۔

دوسری طرف یوکرائن کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ترک صدر ایردوان اور ترک قوم کا شکریہ ادا کیا ہے اور کہا ہے روسی جنگی جہازوں کو بحیرہ روم میں داخل ہونے سے روکنا اور یوکرائن کی امداد، اس وقت بہت اہم ہے۔ یوکرائن کے عوام اسے کبھی نہیں بھولیں گے۔

صدر ایردوان نے ایک دن قبل کہا تھا کہ یہ حملہ بین الاقوامی قانون کے خلاف ہے اور خطے کے امن، سکون اور استحکام کے لیے ایک زبردست دھچکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ترکی، یوکرائن کی علاقائی سالمیت کی حمایت کرتا ہے اور روس کے حملے سے "دلی طور پر غمزدہ” ہے۔

صدر ایردوان، جن کے روس اور یوکرائن، دونوں ممالک کے رہنماؤں کے ساتھ اچھے تعلقات موجود ہیں، انہوں نے اس سے قبل تنازعہ میں ثالثی کی بھی پیشکش کی تھی، اس سے قبل جمعرات کو یوکرائن کے صدر ولادیمیر زیلنسکی سے ٹیلی فون پر بات کی تھی۔

صدر ایردوان نے کہا کہ "ترکی، اس جنگ میں یوکرائن کی علاقائی سالمیت کی حمایت کرتا ہے۔”

ترکی کی وزارت خارجہ نے روس کی فوجی کارروائیوں کو فوری طور پر بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ وزارت نے کہا، "یہ حملہ بین الاقوامی قانون کی سنگین خلاف ورزی ہے اور ہمارے خطے اور دنیا کی سلامتی کے لیے سنگین خطرہ ہے۔”

ترک وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا کہ "ہم روسی فیڈریشن سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس غیر منصفانہ اور غیر قانونی عمل کو فوری طور پر ختم کرے۔”

تبصرے
Loading...
%d bloggers like this: